“Religion is the cause of all wars.”

“Religion is the cause of all wars” is an often repeated phrase and is the subject of this article. The people who assert this are of course secular anti-religious people. This idea therefore comes from a wider viewpoint which considers religion as something inherently irrational. I discussed this a while earlier in a previous article where I said the following:

“This in a very simplified form is the way many atheistic or secular people view religion. Something almost hallucinatory and delusional. For them all that exists is the tangible, the material, that which we can see and touch. I will call this position “Materialism” or “Naturalism”. Some people just grow up with an inherit disposition to rejecting anything beyond the material (5 senses) world and some of these people become scientists and carry this prejudice into the field of science.”

https://faatih.wordpress.com/2008/12/09/why-do-many-scientists-disbelieve-in-god/

Religion therefore is something irrational in the minds of such people, and thus any belief or action which emanates from religion is itself irrational. Believers are in a state of delusion and thus their actions are likewise deluded. However the inconsistency with this opinion is that often they view violence for secular purposes as being perfectly justifiable and “more rational”. I will come back to this later, however first let’s look at the statement “religion is the cause of all wars” in more detail.

There have been countless wars in history and we cannot look at them all to see if they were based on religion but however we can look at major wars, or major powers which engaged in a lot of war.

The British Empire.

The British Empire is the biggest empire the world has ever seen, unrivalled by any other in terms of sheer size and also in terms of the many parts of the world it covered. The world today is still seeing the legacy of this huge empire in many ways, from the dominance of the English language, to the administrative systems it left behind in countries such as India with its population of over 1 billion people. The British Empire did not conquer territory for the sake of religion but for economic and political reasons.

The American war of independence where the 13 colonies of what is now America fought the British government was not about religion but about what the settlers in America viewed as being able to govern themselves as they wished to. One of the key phrases of the independence movement was “no taxation without representation”.

The British did not conquer India, the “jewel in their crown”, for religious reasons but for economic ones. One of the most bloody parts of British rule in India has been described by British writer George Monbiot.

“In his book Late Victorian Holocausts, published in 2001, Mike Davis tells the story of famines that killed between 12 and 29 million Indians. These people were, he demonstrates, murdered by British state policy. When an El Niño drought destituted the farmers of the Deccan plateau in 1876 there was a net surplus of rice and wheat in India. But the viceroy, Lord Lytton, insisted that nothing should prevent its export to England” [1]

This policy resulted in the deaths of millions of people but had nothing to do with religion, but just sheer human greed.

Another major war during the British Empire was the Boer war, noticeable, since that is the first time concentration camps were created.

Boer guerilla fighters. The Boers were white settlers in Africa of Dutch origin who fought the British.

The Boer war was about a variety of different things including about control of valuable territory which contained valuable mineral resources.

The British Empire was not a Christian fundamentalist empire and never sought to forcibly impose Christianity, so its wars in Africa, the Carribean, America, Asia and Australia had nothing to do with religion but to do with conquering new land, economic reasons and geo-politics.

The Mongols

The British Empire was the biggest empire in history and the Mongol Empire came second. However it is the biggest contiguous land Empire stretching from the yellow sea in China to eastern Europe.

The Mongols were bloody and brutal and massacred whole cities. They sacked the capital of the Abbasid Empire, Baghdad in 1256 destroying huge numbers of books on many different subjects thus causing the world to be deprived of valuable works from an Arab civilization which not only transmitted the works of ancient Greece to Europe but had many great intellectual, engineering and literary accomplishments of its own. Centuries after the Mongol conquest, Iraq was still recovering ecologically due to the destruction they had bought.

The Mongols were a nomadic people who loved war and conquest and fought not for religion but to extend their power.

Alexander and Rome.

Alexander of Macedonia, often called “the Great” is also one of history’s great warriors. His conquest of a huge territory comprising many lands of different races, languages and cultures was not inspired by religion but by the desire to conquer to realize personal greatness. Many of the rulers of the ancient period conquered, merely for the sake of conquering. The greater the territory they controlled and the more people, the greater they themselves were. This was a case of territorial and personal self-aggrandizment often driven by a masculine need to increase the personal glory of a certain ruler, to show his virility. A ruler in some cultures of the ancient past who was not a warrior, was not a true man and in some cases was seen as a weakling not fit to rule.

Actor starring as Alexander.

Whereas Alexander conquered south-west Asia and Egypt, the Romans conquered Europe and the mediterranean. They have left a huge impact on western civilization and their Empire lasted for centuries. They did not conquer their Italian neighbours the Etruscans, or their rivals the Carthiginians and conquer France, Spain, England and other countries due to religion but once again for political and economic reasons. When the Romans conquered Carthage, which was then their rival for supremacy of the mediterranean, they burnt every single house and building in the city and killed and enslaved all its people, this was not done since they felt that their gods would told them to, but to prevent Carthage from once again ever being a threat to the Roman domination in the Mediterranean.

If we look at the wars of the ancient past, and also of the past millenia we can see that wars were not carried out primarily for religious reasons whether it was the native American Indian tribes that fought each other prior to the arrival of Europeans, or the Ming, Tang and other dynasties of China, or wars carried out by the Bantu-speaking kingdoms of Africa.

Let us now look at some more recent examples of war.

The first and second world war.

These wars took place due to tensions between the major European powers. Religion was not the reason, but the interests of different nation-states. When the Japanese bombed pearl Harbour they did not do so because of Shintoism but since they saw the US as a threat. When the US dropped the atom bomb on Hiroshima and Nagasaki, they did not do so because they thought the bible taught them to do so.

The atom bomb being dropped on Nagasaki, Japan.

The superpower conflict that followed the defeat of Nazi Germany, between the US and USSR, called “The Cold War” was not about religion either but about two competing secular ideologies, capitalism and communism. One way the cold war manifested itself was in the Vietnam war.

The Vietnam War.

This war saw a communist North Vietnam seeking to take control of the whole of the country with western powers such as the US opposed to it. It has become embedded in the collective psyche here in the west and especially in the US since it happened during the 1960s that great period of cultural change. Many young people who may not have been that politicized went out on the streets rallied to action by what they felt was an unjust and pointless war which was causing many young Americans to die, as well as the suffering of the Vietnamese. In this war agent orange which has horrific results such as deformities to newly born babies was used.  Laos and Cambodia were also bombed during this war.

“From 1964 to 1973, the U.S. dropped more than two million tons of ordnance over Laos during 580,000 bombing missions – equal to a planeload of bombs every 8 minutes, 24-hours a day, for 9 years.” [2]

One of the key men responsible for this appalling savagery was war criminal Henry Kissinger. Kissinger never ordered such bombings due to any religious belief but out of a desire to thwart communism.

War criminal, Henry Kissinger.

Communists also murdered many people through out the world including in Stalin’s USSR which also saw things such as mass deportation of whole ethnic groups and the creation of gulags in Siberia, as well as the 1 million Cambodians killed by the atheist Khymer rouge.

Children who were victims of the Khmer rouge communists. Estimates of the number of people killed by the Khmer Rouge range from 850,000 to 2 million.

Even those conflicts which are ostensibly based on religion are often in reality about different things. There are of course conflicts which have been caused due to religion, abuse of religion and so forth. However they do not compare to the amount of wars and lives lost due to secular reasons. The biggest example is of course the greatest bloodbath that humanity has ever witnessed, the second world war, which saw the death of over 50 million people. The Nazi party was not a religious organization, and nor were any of its major enemies such as the US, UK or the Soviet Union, religion-based states, Nazism is a race-based ideology believing in the superiority of the Nordic race.

The world since time immemorial has seen countless wars in every part of the world. However wars are just one form of human conflict and violence. Violence can manifest itself in the form of a man abusing his wife, or football fans fighting each other. At such a level no one argues that it is caused by religion. Divorces do not occur due to religion but because two people cannot live with each other. This maybe a myriad of different reasons, such is the case when two nations or states cannot resolve their differences and resort to war. The phrase “religion is the cause of all wars” is clearly false as can be seen by any objective study of war.

The irony is that the same type of people who say this false claim are also sometimes the same ones who regurgitate what Karl Marx said about religion, that is “religion is the opium of the masses”. There is a huge contradiction here.

1. “Religion is the cause of all wars” – it causes people to rise up and fight.

2. “Religion is the opium of the masses” – it causes people to sit down and be quiet.

As we can say they are contradictory.

Marx said his famous phrase in a certain context. The vast majority of people in Europe at the time were peasants, or in Russia, serfs were they basically slaves to a landowning elite. The Church did not call for the restructuring of this social system but legitimized and perpetuated it. It called for obedience to the monarch or the status quo and said that hardship in this world would be compensated by happiness in the next. This statement of Marx’s came from a certain reality which existed. However this labelling of religion as causing people to be violent on the one hand, and then labelling it to be the cause of people to be submissive and quiet on the other is a reflection of the inherent prejudice against religion held by certain people. This prejudice is so strong that they utter commonly regurgitated phrases such as “religion is the cause of all wars” in the face of obvious evidence to the contrary.

There is a certain annoyance that people believe in anything beyond the material, at some times even an anger at such “irrational” beliefs. People believing in the existence of things beyond the material world are “stupid”, and in a form of insanity. Thus the supposedly rational and intellectually superior atheist or agnostic due to his hatred of religion say it is the cause of all wars, ignoring the fact that Genghis Khan, Julius Caesar, Alexander, Hitler, Stalin Kissinger never killed due to religion but for secular reasons.

We can point to religious extremists who wage war in the name of religion. Their existence is undeniable.

However the reason why people kill, whether it be on a personal level or on a collective level is primarily nothing to do with belief in the divine.

Columbine killers, who massacred individuals.

Hitler, who massacred whole nations.

The belief in a creator, the belief in the divine, and that the world is not merely confined to the material, pensensory (5 senses) world does not automatically cause one to be violent or to wage war. Religions such as Islam or Christianity as much as some may claim to the opposite with misuse of certain verses out of context do not call for killing for no reason. The desire to vilify religion as something malevolent by those who merely belief in the material, that which is tangible  is fruitless as belief in the creator and in the soul and in the hereafter will always exist. Religion can not be potrayed as a wholly malevolent phenomenon when it has been the cause of much good in the world, be it from those who restrain themselves from doing things they wouldn’t normally do, causing racial barriers to come down for the sake of a trans-racial brotherhood, those who go out and help others inspired by a message of abandoning greed and personal self-fulfillment and changing the lives of others.

1458230283_0d676461761

– Faatih.

 

 

 

 

1. http://www.guardian.co.uk/books/2005/dec/27/eu.turkey

2.http://www.legaciesofwar.org/traveling-exhibit/history/history-bombing-laos

 

Advertisements

Larnaka mosque

A mosque in the island of Cyprus.

Mosque behind pink flowers

Image may contain: sky, flower, outdoor and nature

You are your own obstacle.

Often we look at others, and blame others for our state, our failures, our sadness, but it is often we ourselves who are our own greatest enemies.

“Oh you, others you love to hate.

Without them you feel life would be so joyous and so great.

Yet your faults are far more than what they have done to you.

Opportunities are many and if you do not take them, that you will rue.

Let us forget about others, forget about ‘them’ and ‘they’.

Let us dwell on our own faults and for our own improvement, let us pray.”

 

Image result for tears eyes

Unleash that energy, that power with you, that zest

Forget about the others, all the rest, be your best

Smile, be grateful, help others, for them care

Donate, be generous and with others share

The goodness you for your brothers and sisters in humanity

Will return to you in many ways, in multiplicity.

Even if they were wrong, be strong, for the day is long.

Look inward, deep within, for there is a greatness deep inside.

Turn to your lord, work hard and to Him pray and confide.

Look up high, at the sky, oh my.

You, wonderful you, be proud of you don’t be shy.

You can do it, you can achieve and excel.

Yourself through your hard work you can propel.

On negativitiy do not excessively dwell.

Your problems to your Lord pray and to him tell.

You are your own worst enemy, be your greatest critic.

Always progress, always others benefit, be dynamic.

Look with in you, inside, look deep.

I wish you a wonderful day tomorrow after your sleep.

I wish you the best, for you are truly a divine work of art.

Take care, be strong, but for now these are my words and I must depart.”

  • Faatih

 

When your heart is hurting…

Give me eyes that…

No automatic alt text available.

Happy Eid, Eid Mubarak

 

A happy Eid, a blessed Eid, a joyous Eid to you all and to your families. May Allah accept your fasting and your prayers and bless you.

All praise be to Allah and peace be upon his final prophet, Muhammad صلی اللہ علیہ وسلم, and his noble family and companions and his ummah (community) and all the prophets and their ummat (followers).

 

دعاکی طاقت

اپنے تمام تر فخر کے باوجود انسان یہ تسلیم کرتا ہے کہ وہ کمزور ہے۔ ناراضگی، غصے اور گہرے غم کے عالم میں انسان اس طاقت کی طرف لوٹ جانا چاہتا ہے جو اسکی تمام فریادیں سنتی ہے۔ اسلام میں اس طاقت کا نام خدا یعنی اللہ ہے۔ اس کی مثال یہ ہے کہ اگر ایک آدمی ڈوب رہا ہے اور موت کے بہت قریب ہے یا اسکا کوئی بہت قریبی موت کے منہ میں ہے تو اپنی تمام تر عقل اور دولت کے باوجود وہ یہ محسوس کرے گا کہ وہ کتنا بے بس ہے۔

اسلام میں روزانہ پانچ بار ہم عبادت کرتے ہیں جسکو ” صلاۃ” کہتے ہیں۔ نماز ادا کرنا اور اللہ سے کچھ مانگنا ”دعا” کہلاتا ہے۔ تاہم بڑی قوتوں سے مانگنے سے جتنے بھی طریقے ہیں ان میں ہر کوئی ضرورت کے وقت مانگتا ہے۔

اسلام کے مطابق اللہ ہم سے کبھی بھی تھکاوٹ کا اظہار نہیں کرتا چاہے جب بھی مدد مانگی جائے۔ انسان تاہم مختلف ہیں، اگر ہمارا کوئی دوست ہے تو اگر ہم اس سے لگاتار مدد مانگیں تو وہ تنگ آجاتا ہے۔ اللہ کے ساتھ معاملہ مختلف ہے جتنا بھی مانگیں اتنا عطا ہوگا۔ دعا ایک عبادت ہے.دعا ایک ایسا عمل ہے جو انسان کو احساس دلاتا ہے کہ وہ کمزور ہے لیکن اسکا خالق ہر چیز پر قادر ہے۔ جب بھی ہم اسکی طرف جاتے ہیں ہمیں یہ احساس ہوتا ہے کہ وہ طاقتور ہے۔

جیسا کہ قرآن میں لکھا ہے :” تمھارا رب کہتا ہے: تم مجھے پکارو؛ میں جواب دوں گا)دعا( ” سورۃ ۴۰، آیات نمبر ۶۰

کوئی بھی خالق کی طرف لوٹ کر اپنی زبان میں مانگ سکتا ہے۔ تاہم اسلام میں راہنمائی موجود ہے۔

دعا مانگنے کا صحیح طریقہ :

اسلام ہمیں دعا مانگنے کا صحیح طریقہ بتاتا ہے کہ اپنے ہاتھ اٹھائیں اور

اپنے رب کی تعریف بیان کریں اور عربی میں موجود اسکے ناموں سے پکاریں جیسے کہ ” یارحمان

) رحم کرنے والے (یا رزاق )دینے والا( اسکے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے لیئے دعا کریں اور سلامتی کی دعا کریں، محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلمپانچ دفعہ دعا مانگنے کے لیئے وہ طریقہ سب سے اچھا ہے جو خود حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنایا، لیکن دعا ہر زبان میں مانگی جاسکتی ہے حتیٰ کہ کچھ غلط نہ مانگا جائے۔ اور دعا کے اختتام میں بھی درودواسلام پڑھیں دعا مانگنے کا بہترین طریقہ :کچھ ایسے حالات اور اوقات ہیں جن میں دعا زیادہ قبول ہوتی ہے۔ جن میں شامل ہیں رات کا تیسرا حصہ ، جس میں پرہیزگار مسلمان جاگتے ہیں اور دعا مانگتے ہیں سفر کے دوران مانگی گئی دعاجب کسی پر ظلم کیا گیا ہو، مظلوم کی دعا بہت جلد قبول ہوتی ہے اسی دعا کی وجہ سے کچھ ظالم اور جابر حکمرانوں کا خاتمہ ہوا ہے۔ جب کوئی بیمار ہو یا آپ کسی بیمار کی عیادت کے لیئے جائیںجب کوئی وضو کر کے ہٹے )دعا اور نماز کے لیئے ضروری چیز (اذان کے درمیان ) نماز کے لیئے بلاوہ (یا اقامے کے درمیان سجدے کی حالت میںاور وہ دعا جو گروہ کی شکل میں مانگی جائے۔ جیسے کہ امام کے پیچھے نماز کے بعد اسکا اثر اکیلے مانگی گئی دعا سے زیادہ ہوتا ہے۔  میری دعا کیوں قبول نہیں ہوتی ؟دعا قبول نہیں ہوگی اگر اس آدمی کے کپڑے، کھانا یا کمائی پاک نہیں جیسا کہ اس کے پاک ہونے کا حکم ہے۔ اگر کوئی منشیات فروش ہے تو اسکی دعا قبول نہیں ہوگی کیونکہ یہ اسلام کے خلاف ہے۔ اللہ ہم سب کا خالق و مالک ہے۔ وہ ہمارا مالک اور ہم اسکے غلام ہیں۔ وہ ہمارا غلام نہیں ہے اور نہ ہی ہمارا حکم ماننے کا غلام ہے۔ دعا مشین میں سکہ ڈال کر کولڈ ڈرنک حاصل کرنا نہیں ہے۔ یہ طریقہ اس دنیا کے خالق کی شان میں گستاخی ہے۔ دعا کے لیئے صبر اور وقت درکار ہوتا ہے جیسا کہ ایک پودے کے اگنے کے لیئے درکار ہوتا ہے۔ پودے کو پھل دینے میں وقت لگتا ہے اسلیئے صحیح وقت کا انتظار کریں۔ اگر ایک شخص بے صبرا ہورہا ہے اور آخر میں کہتا ہے اللہ میری تو سنتا نہیں ہے تو اسکی دعا اللہ کی طرف سے رد کردی جائے گی۔ اگر ہم صبر کرتے ہیں روزانہ دعا مانگتے ہیں اور اللہ کی رضا میں راضی رہتے ہیں تو جلد ہی ہمیں صبر کا پھل ملے گا اور بہار ضرور آئے گی۔اللہ یا تو ہماری دعا قبول کرتا ہے ہمیں ہماری مانگی ہوئی چیز نہیں ملتی بلکہ اس سے بہتر کچھ مل جاتا ہے۔ہماری بلا کو ٹال دیتا ہے تاہم دنیا کے مالک پر ہماری دعا کو قبول کرنے کی ذمہ داری نہیں ہے۔ مثال کے طور پر، اگر ایک میاں اپنی بیوی کے لیے بری زبان استعمال کرتا ہے، جو کہ اسلام کی تعلیمات کے خلاف ہے۔ جیساکہ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہے۔اللہ ان لوگوں پر رحم نہیں کرتا جو لوگوں پر رحم نہیں کرتےبہترین مومن وہ ہیں جو کردار میں اچھے ہیں، اور اچھے لوگ وہ ہیں جو اپنی بیویوں کے لیئے اچھے ہیں

حدیث وہ ہے جو حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بیان کی ہو، بخاری اور ترمذی سے

اللہ تعالیٰ کو کسی کے ساتھ زیادتی پسند نہیں ہے، حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایک واقعہ بیان کیا ہے , ایک اسرائیلی خاتون جو کہ پیاسی تھی اس نے کنویں سے پانی پیا، اپنی پیاس بجھانے کے بعد اس نے دیکھا کہ ایک کتا پیاسا ہے تو اس نے اپنے جوتے سے اسکو پانی پلایا۔ حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بتایا کہ اس کام کے لیئے اسکو دو جہانوں کے مالک نے جنت عطا کی۔

اسلیئے جب کوئی آدمی گناہ کرتا ہے، چوری کرتا ہے اور دوسروں کو نقصان پہنچاتا ہے تو اسکی دعا قبول نہیں ہوتی۔

اپنی دعا کو مضبوط بنائیں:

ہم اپنی دعا کو مضبوط بنا سکتے ہیں کسی اس چیز کو ظاہر کر کے جو اللہ کو بہت پیاری ہے۔ مثال کے طور پر دنیا میں ہم اپنے کسی دوست سے اس طرح مدد مانگ سکتے ہیں کہ ” تمہیں یاد ہے، میں نے بھی تمھاری مدد کی تھی” میں تمھارا بھائی اور دوست ہوں۔

اللہ کے ساتھ بھی یہی معاملہ ہے، اسکو عربی میں تواسل کہتے ہیں۔

اسلام میں تین طرح کے تواسل قبول ہوتے ہیں ) یہ اسلامی فقہ کا بہت گہرا مسئلہ ہے (

۱۔ اللہ سے اسکے ناموں اور صفات سے مانگنا

تو ہم یا اللہ ) اے میرے رب (یا رحمان)او رحم کرنے والے( یا حکیم ) حکمت والے (اور پھر دعا مانگیئے۔ یہ روزانہ کی مثال بھی ہے کہ جب ہم کسی کو اس کے نام اور کردار سے بلاتے ہیں تو وہ ہمیں زیادہ بہتر جواب ملتا ہے۔ مثال کے طور پر” عزیز راہنما ، ہماری مدد کیجیئے” کے بجائے ہم کہہ سکتے ہیں کہ ” عزیز راہنما، آپ ہی ہمیں بچانے والے ہیں ، ہماری مدد کیجیئے ”

 

cherryblossomstidalbasin1

۲۔ اس سے کہہ سکتے ہیں جو ہم سے زیادہ مذہبی ہو۔

ہم دعا کے لیئے اس مسلمان کے پاس جا سکتے ہیں جو ہم سے زیادہ اللہ کے قریب ہو۔ مثال کے طور پر جب کوئی کمزور مسلمان ہو اور اس نے کچھ اسیے کام کیئے ہیں جو اللہ کو پسند نہیں وہ کسی اور سے کہہ سکتا ہے مدد کے لیئے۔ ہماری روز مرہ کی زندگی میں ہم دیکھتے ہیں کہ وہ بندہ جس کے پاس طاقت ہے اپنے قریبی کی بات زیادہ غور سے سنتا ہے۔

۳۔ اپنے اچھے کاموں کی یاد دہانی کروائیں۔

ہماری دعا کے اندر ہم کہہ سکتے ہیں کہ ”یا اللہ میں روزانہ دعا مانگتا ہوں، میری دعا قبول کیجیئے”۔ یا پھر” میں رمضان میں پورے رکھتا ہوں، میری فریاد پر نظر ڈالیئے ” آپ جو بھی کر رہے ہیں نماز پڑھ رہے ہیں، روزہ رکھ رہے ہیں یا کسی کو دیکھ کر مسکرا رہے ہیں ) جی ہاں اسلام میں مسکرانا بھی عبادت ہے ( سڑکے کنارے کسی بڑھیا کی مدد کرنا یا کچھ بھی۔ اپنے اچھے کاموں کی یقین دہانی ہماری دعا کو مضبوط کردیتی ہے، جیسا کہ ہماری روزمرہ کی زندگی میں ہوتا ہے۔

قرآن کی پڑھائی:

انسانی تاریخ مین قرآن سب سے بہترین کتاب ہے۔ایسی کوئی کتاب نہین جس مین اتنی زیادہ راہنمائی موجود ہو۔ کوئی اور کتاب لوگوں کو اتنے دلوں سے یاد نہیں جتنی یہ یاد ہے۔ تمام تر اختلافات کے باوجود، یہ کتاب ۱۴۰۰ سالوں سے اسی حالت میں موجود ہے اور اسکا ایک حرف بھی تبدیل نہیں کیا جاسکتا۔ انڈونیشیا سے ماروکو تک قرآن ایک ہی ہے۔ سالوں سے بھٹکتے لوگوں کو ایک آدمی نے جنگل سے نکلنے کا راستہ دکھایا کیونکہ اسکے پاس نقشہ تھا اور وہ نقشہ قرآن ہے۔ دعا قرآن پڑھنے سے زیادہ مضبوط کی جاسکتی ہے۔ دعا کے علاوہ بھی قرآن کو روز پڑھنا چاہیے، اسکی تلاوت کرنی چاہیے۔ قرآن صرف عربی میں موجود ہے۔ بہت کم لوگوں نے اسکو مختلف زبانوں میں کرنے کی کوشش کی ہے۔ قرآن پڑھنے کے بعد، آپ دعا مانگ سکتے ہیں اور ایک بندہ دوسرے کو قرآن تواسل سے پڑھا سکتا ہے۔ قرآن کا اصل مطلب بہت کم لوگوں کو پتا ہے۔ یہ صرف پڑھنے اور عمل کرنے کی کتاب نہیں ہے بلکہ ایک دوا ہے ، ایک پرفیوم ہے جس سے بھینی بھینی خوشبوآتی ہے۔ ایک گھر میں قرآن کی تلاوت اسکی بحالی کا باعث بنتی ہے۔ ایک گھر جہاں پہلے لڑائی اور جھگڑا تھا قرآن کی خوشبو وہاں خوشی اور سکون لے کے آتی ہے، اگر اسکو روزانہ پڑھا جائے۔

 

tulip21

قرآن کی تلاوت گھر میں سکون لے کرآتی ہے، جیسا اللہ کے پیامبر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہے۔ جب انہوں نے ہمیں بتایا کہ قرآن کے دوسرے باب کو پڑھنے سے جو کہ البقراہ ہے شیطان تین دن تک گھر میں داخل نہیں ہوتا۔

ابپے گھروں کو قبروں میں تبدیل نہیں کرو۔ شیطان کو اس گھر میں داخل ہونے سے روکا جاتا ہے جہاں البقراہ کی تلاوت کی جاتی ہے۔

صحیح مسلم

تو جیسے ہم گھر میں پھولوں اور خوشبووں کا اہتمام کرتے ہیں خوشبو لانے کے لیئے، قرآن کی تلاوت کرنے سے گھر سے گناہوں کی بدبو ختم ہوجاتی ہے اور اچھی خوشبو پھیل جاتی ہے۔ ہر گناہ گندہ اور ناپاک ہوتا ہے۔ ایک بچہ جو والدین کی عزت نہیں کرتا، ایک شوہر جو بیوی سے اچھا سلوک نہیں کرتا۔ مستقل لڑائیاں اور جھگڑے گھر میں گندگی کا سبب بنتے ہیں۔ انکو مٹانے اور صاف کرنے کا طریقہ یہ ہے کہ اللہ کی طرف رجوع کیا جائے اور باقاعدگی سے قرآن پڑھا جائے، خاص طور پر سورۃ البقراہ ) جو کہ قرآن کی دوسری سورۃ ہے (

قرآن ایک خزانے کی طرح ہے جس میں بہت سارے زیور ہیں۔ انگریزی کی ایک کہاوت ہے” ہیرے عورت کے بہترین دوست ہیں” قرآن ہیروں سے بھرا ہوا ہے اور ان تمام زیورات سے کہیں بہتر ہے۔ یہ انکا بہترین دوست بن سکتا ہے جو اسکو ضرورت کے وقت پڑھتے ہیں۔ جیسے ہر قیمتی پتھر کی اپنی خاصیت ہوتی ہے بلکل اسی طرح قرآن کی ہر سورۃ کی اپنی خاصیت ہے۔

mc-oval-stoneset-ring

فاتحہ:

یہ قرآن کی سب سے پہلی سورۃ ہے، اگر صحیح طرح تلاوت کی جائے تو یہ ہر مشکل کا حل ہے۔

میں نے خود اپنی مشکل میں اسکو پڑھا تھا اور جلد ہی مجھے اپنی مشکل کا حل مل گیا۔

یوسف:

قرآن کی بارویں سورۃ ہے۔ جو کہ حضرت یوسف کی زندگی کے بارے میں ہے ) جوزف، ان پر سلامتی ہو(

ان کے امتحانات کے متعلق ہے، یہ پڑھنے والے کو خوشی دیتی ہے۔ یہ غم کے سال میں نازل ہوئی تھی ، جب حضور صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی بیوی اور چچا دونوں کا انتقال ہوگیا تھا۔ میں نے اسکو اسی قسم کی مشکلات میں پڑھا تھا اور دو، تین میں مجھے بہتر محسوس ہوا۔

یسین:

یہ قرآن کی ۳۶ سورۃ ہے اور تب پڑھی جاتی ہے جب آپ پر کوئی انہونی مصیبت آن پڑے۔میں نے اس سورۃ کو پڑھا ہے یا تو میری مشکلات مکمل طور پر حل ہوگئی یا پھر ان میں کمی واقع ہوئی۔

واقعہ:

قرآن کی ۵۶ سورۃ جس کے بارے میں حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا

” جو اس سورۃ کو رات میں باقاعدگی سے پڑھے گا، کبھی غربت نہیں دیکھے گا”)بے حقی(

میرا ایک کنٹریکٹ ختم ہونے کے بعد میں نے اسے پڑھا اور کچھ گھنٹے بعد ہی مجھے کام کے لیئے کال موصول ہوئی۔

آیت الکرسی:

قرآن ایک عظیم کتاب ہے اور آیت الکرسی  )  آیت= ورس ، کرسی= تخت( پورے قرآن میں سب سے عظیم آیت ہے اور اس میں بہت طاقت ہے۔

اللَّهُ لاَ إِلَهَ إِلاَّ هُوَ الْحَيُّ الْقَيُّومُ لاَ تَأْخُذُهُ سِنَةٌ وَلاَ نَوْمٌ لَهُ مَا فِي السَّمَاوَاتِ وَمَا فِي الأَرْضِ مَنْ ذَا الَّذِي يَشْفَعُ عِنْدَهُ إِلاَّ بِإِذْنِهِ يَعْلَمُ مَا بَيْنَ أَيْدِيهِمْ وَمَا خَلْفَهُمْ وَلاَ يُحِيطُونَ بِشَيْءٍ مِنْ عِلْمِهِ إِلاَّ بِمَا شَاءَ وَسِعَ كُرْسِيُّهُ السَّمَاواتِ وَالأَرْضَ وَلاَ يَئُودُهُ حِفْظُهُمَا وَهُوَ الْعَلِيُّ الْعَظِيمُ

ترجمہ:

اللہ کے سوا کوئی اور معبود نہیں ہے

وہ آپ زندہ اور اوروں کو قائم رکھنے والا ہے

اس نہ نیند آتی ہے نہ اونگھ

اسی کا ہے جو کچھ آسمان میں ہے اور زمین میں

وہ کون ہے جو اسکے یہاں سفارش کرے بغیر اسکے حکم کے

جو کچھ ان کے آگے اور پیچھے ہے وہ سب جانتا ہے

اور وہ نہیں پاتے اسکے علم میں سے کچھ، مگر جتنا وہ چاہے

اسکی کرسی میں سمائے ہیں آسمان اور زمین

اور اسے بھاری نہیں انکی نگہبانی

اور وہی ہے بلند بڑائی والا

میں نے یہ آیت ضرورت کے وقت پڑھی ہے اور اللہ نے میری مدد کی ہے جس کے لیئے میں اللہ کا شکرگزار ہوں۔

سورۃ یسین:

Waja’alnaa mim bayni aydeehim saddan wamin khalfihim saddan faaghshaynaahum fahum laa yubsiroon

ہم نے ایک دیوار انکے آگے اور ایک پیچھے بنا دی ہے تاکہ وہ دیکھ نہ سکیں۔

 یہ آیت پڑھیں اور اپنے ہاتھوں پر پھونک ماریں اور منہ پر پھیر لیں۔ یہ حجاب یا ڈراھی والے مسلمانوں کی مدد کرتی ہے تعصب سے لڑنے میں۔

طحٰہ:

یہ قرآن کی ۲۰ سورۃ ہے۔ یہ شادی میں مدد کے لیئے استعمال ہوتی ہے۔ اگر کسی کی شادی نہیں ہورہی تو اسے پڑھیں یا پھر کسی خاندان کے دوسرے فرد کے لیئے بھی پڑھی جا سکتی ہے۔

دعا تمام مذاہب میں مانگی جاتی ہے یہ انسانی ثقافتوں کو ختم کرتی ہے اور ہمارے اندر کمزوری کا احساس جگاتی ہے، کہ خدا سے زیادہ کوئی مددگار نہیں ہے۔ ہم پوری زندگی اللہ سے کسی نہ کسی چیز کے لیئے سوال کرتے رہتے ہیں جو کہ ہر چیز پر قادر ہے۔ اگر ہم کسی دوست سے مستقل مدد مانگیں تو وہ تنگ آجاتا ہے یا پھر اپنی دوسری چیزوں میں مصروف ہوجاتا ہے۔ تاہم اللہ کے ساتھ دوسرا معاملہ ہے جب بھی ہم دعا کرتے ہیں تو یہ عبادت میں گنا جاتا ہے۔ دعا کو حضور اکرم صلی اللہ ہو علیہ وآلہ وسلم نے ماننے والے کا ہتھیار قرار دیا ہے۔ اس کو استعمال کرکہ آپ اپنی مشکلات پر قابو پاسکتے ہیں۔ بہت سے مسلمان نہ تو دعا مانگتے ہیں نہ ہی قرآن پڑھنا چاہتے ہیں۔ پرانے زمانے کے پرہیزگار افراد روزانہ ۲۰ صفحات پڑھتے تھے۔ ہم میں سے بہت سے لوگ ، جو نئے ہیں اور عربی پڑھنا نہیں جانتے۔ تاہم آپ روز دو آیات پڑھ سکتے ہیں تقریبا ایک سال تک۔ قرآن کی روزانہ تلاوت سے ہماری دعا کی قبولیت میں بہتری آتی ہے۔اس سے صرف ہماری ذات میں نہیں بلکہ پورے مسلم معاشرے میں تبدیلی آئے گی۔


November 2018
M T W T F S S
« Jul    
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
2627282930  

Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 87 other followers

Blog Stats

  • 175,702 hits
Advertisements

%d bloggers like this: